روٹی کے ٹکڑے کی بے احترامی فقر و تنگدستی کا سبب

Sun, 03/03/2024 - 05:53

رسول خدا صلی الله علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا: عِشْرُونَ خَصْلَةً تُورِثُ الْفَقْرَ... اِهانَةُ الْکِسْرَةِ مِنَ الْخُبْزِ؛ ۲۰ چیزیں انسان کی فقر و تنگدستی کا سبب ہیں ۔۔۔۔ (ان میں سے ایک) روٹی کے ٹکڑے کی بے احترامی ہے ۔ (۱)

حضرت امام صادق علیہ السلام فرماتے ہیں کہ «دَخَلَ رَسُولُ اللَّهِ عَلی عایِشَةَ فَرَأی کِسْرَةً کادَ اَنْ تَطَأها فَاَخَذَها وَاَکَلَها وَقالَ یا حُمَیْراءُ اَکْرِمِی جِوارَ نِعْمَةِ اللَّهِ عَلَیکِ فَاِنَّها لَمْ تَنْفِرْ عَنْ قَوْمٍ فَکادَتْ تَعُودُ اِلَیْهِمْ ؛ رسول خدا صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم عایشہ کے پاس پہنچے تو آپ نے روٹی کا ٹکڑا زمین پر گرا ہوا دیکھا جو عنقریب ان کے قدموں کے نیچے آجاتا ، انحضرت (ص) نے اسے اٹھاکر کھالیا اور فرمایا : اے حمیراء (عایشہ) خدا کی نعمت کے لئے اچھی پڑوسن رہو کہ اگر یہ کسی قوم و گھرانے کے پاس سے چلی گئی تو آسانی کے ساتھ واپس نہیں لوٹتی ۔

امیرالمومنین علی علیہ السلام نے فرمایا: «أَكْرِمُوا الْخُبْزَ فَإِنَّ اللَّهَ عَزَّ وَ جَلَّ أَنْزَلَهُ مِنْ بَرَكَاتِ السَّمَاءِ وَ أَخْرَجَهُ مِنْ بَرَكَاتِ الْأَرْضِ قِيلَ وَ مَا إِكْرَامُهُ قَالَ لَا يُقْطَعُ وَ لَا يُوطَأُ وَ عَنْهُ ع قَالَ إِذَا حَضَرَ لَمْ يُنْتَظَرْ بِهِ غَيْرُهُ» ۔ (۲)

روٹی کا احترام کرو کیوں کہ خداوند متعال نے اسے آسمان کی برکتوں سے بھیجا ہے اور زمین کی برکتوں سے اسے باہر نکالا ہے ، اپ سے سوال کیا گیا ، احترام کا کیا مطلب ہے ؟ امام علیہ السلام نے جواب دیا ، روٹی کے احترام کے معنی یہ ہیں کہ اسے نہ پھینکا جائے اور پیروں کے نیچے نہ لایا جائے اور جب روٹی دسترخوان پر آجائے تو کھانے کی دوسری چیزوں کا انتظار نہ کیا جائے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حوالہ:

۱: عِشْرُونَ خَصْلَةً تُورِثُ اَلْفَقْرَ أَوَّلُهَا اَلْقِيَامُ مِنَ اَلْفِرَاشِ لِلْبَوْلِ عُرْيَاناً وَ أَكْلُ اَلطَّعَامِ جُنُباً وَ تَرْكُ غَسْلِ اَلْيَدَيْنِ عِنْدَ اَلْأَكْلِ وَ إِهَانَةُ اَلْكِسْرَةِ مِنَ اَلْخُبْزِ وَ إِحْرَاقُ قِشْرِ اَلثُّومِ وَ اَلْبَصَلِ وَ اَلْقُعُودُ عَلَى أُسْكُفَّةِ اَلْبَيْتِ وَ كَنْسُ اَلْبَيْتِ بِاللَّيْلِ وَ بِالثَّوْبِ وَ غَسْلُ اَلْأَعْضَاءِ فِي مَوْضِعِ اَلاِسْتِنْجَاءِ وَ مَسْحُ اَلْأَعْضَاءِ اَلْمَغْسُولَةِ بِالذَّيْلِ وَ اَلْكُمِّ وَ وَضْعُ اَلْقِصَاعِ وَ اَلْأَوَانِي غَيْرَ مَغْسُولَةٍ وَ وَضْعُ أَوَانِي اَلْمَاءِ غَيْرَ مُغَطَّاةِ اَلرُّءُوسِ وَ تَرْكُ بُيُوتِ اَلْعَنْكَبُوتِ فِي اَلْمَنْزِلِ وَ اَلاِسْتِخْفَافُ بِالصَّلاَةِ وَ تَعْجِيلُ اَلْخُرُوجِ مِنَ اَلْمَسْجِدِ وَ اَلْبُكُورُ إِلَى اَلسُّوقِ وَ تَأْخِيرُ اَلرُّجُوعِ عَنْهُ إِلَى اَلْعَشِيِّ وَ شِرَاءُ اَلْخُبْزِ مِنَ اَلْفُقَرَاءِ وَ اَللَّعْنُ عَلَى اَلْأَوْلاَدِ وَ اَلْكَذِبُ وَ خِيَاطَةُ اَلثَّوْبِ عَلَى اَلْبَدَنِ وَ إِطْفَاءُ اَلسِّرَاجِ بِالنَّفَسِ وَ فِي خَبَرٍ آخَرَ وَ اَلْبَوْلُ فِي اَلْحَمَّامِ وَ اَلْأَكْلُ عَلَى اَلْجُشَاءِ وَ اَلتَّخَلُّلُ بِالطَّرْفَاءِ وَ اَلنَّوْمُ بَيْنَ اَلْعِشَاءَيْنِ وَ اَلنَّوْمُ قَبْلَ طُلُوعِ اَلشَّمْسِ وَ رَدُّ اَلسَّائِلِ اَلذَّكَرِ بِاللَّيْلِ وَ كَثْرَةُ اَلاِسْتِمَاعِ إِلَى اَلْغِنَاءِ وَ اِعْتِيَادُ اَلْكَذِبِ وَ تَرْكُ اَلتَّقْدِيرِ فِي اَلْمَعِيشَةِ وَ اَلتَّمَشُّطُ مِنْ قِيَامٍ وَ اَلْيَمِينُ اَلْفَاجِرَةُ وَ قَطِيعَةُ اَلرَّحِمِ ثُمَّ قَالَ عَلَيْهِ السَّلاَمُ أَ لاَ أُنَبِّئُكُمْ بَعْدَ ذَلِكَ بِمَا يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ قَالُوا بَلَى قَالَ اَلْجَمْعُ بَيْنَ اَلصَّلاَتَيْنِ يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ اَلتَّعْقِيبُ بَعْدَ اَلْغَدَاةِ يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ بَعْدَ اَلْعَصْرِ يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ صِلَةُ اَلرَّحِمِ يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ كَشْحُ اَلْغِنَى يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ أَدَاءُ اَلْأَمَانَةِ يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ اَلاِسْتِغْنَاءُ يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ مُوَاسَاةُ اَلْأَخِ فِي اَللَّهِ تَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ اَلْبُكُورُ فِي طَلَبِ اَلرِّزْقِ تَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ إِجَابَةُ اَلْمُؤَذِّنِ تَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ وَ تَرْكُ اَلْكَلاَمِ فِي اَلْخَلاَءِ يَزِيدُ فِي اَلرِّزْقِ ثُمَّ سَاقَ اَلْحَدِيثَ مِنْ هُنَا إِلَى آخِرِ اَلْخَبَرِ كَمَا فِي اَلْخِصَالِ ۔ مجلسی ، محمد باقر، بحار الأنوار ، ج۷۳، ص۳۱۵ ۔

۲: طبرسی ، حسن بن فضل ، مکارم الاخلاق، ج۱، ص۲۹۲ ۔

Add new comment

Plain text

  • No HTML tags allowed.
  • Web page addresses and e-mail addresses turn into links automatically.
  • Lines and paragraphs break automatically.
2 + 0 =
Solve this simple math problem and enter the result. E.g. for 1+3, enter 4.
ur.btid.org
Online: 40