ازدواج، سیرت انبیاءو معصومین کی بجاآوری

Wed, 07/07/2021 - 08:20

 

            انبیاء و مصومین کی سیرت یہ ہے کہ انہوں نے شادیاں کیں، خاندان آباد کئے اور عوام الناس کے درمیان زندگیاں گزاریں، جو شخص بھی ازدواج کرتا ہے وہ انبیاء و معصومین علھیم السلام کی سیرت بجالاتاہے۔
            شادی کرنا نا صرف پیغمبر اسلام کی سنت ہے بلکہ انبیاء کرام کی بھی سنت ہے۔ ارشاد ربانی ہے “وَلَقَدْ اَرْسَلْنَا رُسُلاً مِّنْ قَبْلِکَ وَجَعَلْنَا لَہُمْ اَزْوَاجًا وَّ ذُرِّیَّةً” (۱) (اے محمد صلی اللہ علیہ وسلم) ہم نے آپ سے پہلے بھی بہت سے رسول بھیجے ہیں اور ان کے لئے ازواج اور اولاد قرار دی ہے ، اس ارشاد ربانی سے صاف معلوم ہوتا ہے کہ انبیاء کرام بھی صاحبِ اہل وعیال رہے ہیں۔
            
سیرت کی کتابوں میں ہے کہ ایک عورت نے امام رضا علیہ السلام کی خدمت میں عرض کیا کہ مولا میں نے فضیلت و کمال حاصل کرنے کے لئے شادی نہ کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے، امام نے اس خاتون کی اس سوچ کو جاننے کے بعد فرمایا:’’تو اپنے اس فیصلہ سے دستبردارہوجا، اس لئے کہ اگر شادی نہ کرنے میں کوئی فضیلت اور کمال ہوتا تو دختر رسول حضرت فاطمہ کیوں ازدواج کرتیں، کیونکہ کوئی بھی فضیلت ایسی نہیں جو حضرت فاطمہ کو حاصل نہ ہو۔
            پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کا ارشاد مبارک ہے: النِّکَاحُ سُنَّتِی فَمَنْ رَغِبَ عَنْ سُنَّتِی فَلَیْسَ مِنِّی” شادی کرنا میری سنت میں سے ہے جس نے اس سنت سے  روگردانی کی وہ مجھ سے نہیں،(۲)
شادی کرنا میری سنت میں ہے جس نے اس سے روگردانی کی وہ مجھ سے نہیں ہےیعنی میرا امتی نہیں ہے ، چونکہ ازدواج کرنا حکم خدا اور سنت انبیاءو مرسلین ہے یہی وجہ ہے کہ ایک شادی شدہ آدمی کی عبادت کو بھی غیر شادی شدہ آدمی کی عبادت پر فضیلت عطا کی گئی ہے جیسا کہ حضور کی حدیث ہے: ’’ المُتَزَوِّجُ النائمُ أفضَلُ عِندَ اللّه ِ مِنَ الصائمِ القائمِ العَزَبِ ‘‘ اللہ کے نزدیک ایک سویا ہوا شادی شدہ، عبادت گزار اور روزہ دار غیر شادی شدہ سے افضل ہے۔(۳ )
            دوسرے مقام پر ہمارے چھٹے امام ، امام صادق علیہ السلام فرماتے ہیں:’’ركْعَتَانِ يُصَلِّيهِمَا الْمُتَزَوِّجُ أَفْضَلُ مِنْ سَبْعِينَ رَكْعَةً يُصَلِّيهَا أَعْزَب‏‘‘ شادی شدہ کی دو رکعت بہتر ہے کنوارے کی ستر رکعتوں سے۔[۴]۔

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حوالہ جات:
(۱)سورہ رعدآیت ۳۸
(۲)جامع الاخبار، ص۱۰۱، شعیری، محمد بن محمد، ناشر: حیدریة، نجف، بى تا۔
(۳)جامع الأخبار , جلد۱ , صفحه۱۰۱
(۴)کافی، ج۵، ص۳۲۸, کلینی، محمد بن یعقوب، بہ اہتمام محمد حسین درایتی، قم، مرکز بحوث دار الحدیث، قسم احیاء التراث، مؤسسہ علمی، فرھنگی دار الحدیث، چاپ اول، ۱۴۳۰ق۔

 

 

Add new comment

Plain text

  • No HTML tags allowed.
  • Web page addresses and e-mail addresses turn into links automatically.
  • Lines and paragraphs break automatically.
8 + 0 =
Solve this simple math problem and enter the result. E.g. for 1+3, enter 4.
www.welayatnet.com
Online: 24